بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
اللہ نہایت رحمت والے بے حد رحم فرمانیوالے کے نام سے درود پڑھتا ہوں
اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلٰی سَیِّدِنَا وَ مَوْلٰنَا مُحَمَّدٍ صَاحِبِ التَّاجِ وَ الْمِعْرَاجِ وَ الْبُرَاقِ وَالْعَلَمِoدَافِعِ الْبَلَآئِ وَالْوَبَآئِ وَ الْقَحْطِ وَ الْمَرَضِ وَ الْاَلَمِo
اے اللہ رحمت فرما ہمارے سردار اور ہمارے آقاا تاج و معراج والے براق اور بلندی والے پر بلیات و وباء قحط و مرض دُکھ اور مصیبت کے دُور کرنیوالے پر
اِسْمُہٗ مَکْتُوْبٌ مَّرْفُوْعٌ مَّشْفُوْعٌ مَّنْقُوْشٌ فِی اللَّوْحِ وَالْقَلَمِoسَیِّدِ الْعَرَبِ وَالْعَجَمِoِ
جن کا اسم گرامی لکھا ہوا ہے بلندہے اور اللہ کے نام کیساتھ جُڑا ہوا ہے لوح محفوظ اور قلم میں رنگ آمیزی کیا ہوا ہے عرب اور عجم کے سردار
جِسْمُہٗ مُقَدَّسٌ مُّعَطَّرٖ مُّطَہَّرٌ مُّنَوَّرٌ فِی الْبَیْت وَالْحَرَمِoِ
جن کا جسم مبارک ہر عیب سے مبرا خوشبو کا منبع انتہائی پاکیزہ نور علی نور اپنے گھر اور حرم میں(ان تمام احوال کے ساتھ آج بھی موجود ہے)
شَمْسِ الضُّحٰی بَدْرِ الدُّجٰی صَدْرِ الْعُلٰی نُوْرِ الْھُدٰی کَھْفِ الْوَرٰی مِصْبَاحِ الظُّلَمِo
صبح کے روشن اور خوشنما سورج چودھویں رات کے چاند بلندی کے ماخذ ہدایت کے نور مخلوق کی جائے پناہ تاریکیوں کے چراغ
جَمِیْلِ الشِّیَمِ ط شَفِیْعِ الْاُمَمِ ط صَاحِب الْجُوْدِ وَالْکَرَمِoوَاللّٰہُ عَاصِمُہٗ وَ جِبْرِیْلُ خَادِمُہٗ وَالْبُرَاقُ
بہترین خلق و عادات والے امتوں کی شفاعت کرنیوالے سخاوت اور کرم کے والی پر درود و سلام اور اللہ انکا محافظ ہے جبرائیل امین خادم ہیں اور براق سواری ہے
مَرْکَبُہٗ وَالْمِعْرَاجُ سَفَرُہٗ وَسِدْرَۃُ الْمُنْتَہٰی مَقَامُہٗ وَقَابَ قَوْسَیْنِ مَطْلُوْبُہٗ
معراج ان کا سفر ہے سدرۃ المنتہیٰ ان کا مقام ہے اور قاب و قوسین(کمال قرب الہی) ان کا مطلوب ہے اور مطلوب یعنی کمال قرب الہی
وَالْمَطْلُوْبُ مَقْصُوْدُہٗ وَالْمَقْصُوْدُ مَوْجُوْدُہٗ سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ خَاتَمِ النَّبِیِّیْنَ شَفِیْعِ الْمُذْنِبِیْنَ
وہی مقصود ہے اور مقصود حاصل ہوچکا ہے تمام رسولوں کے سردار تمام انبیاء کے بعد آنے والے گنہگاروں کی شفاعت کرنیوالے
اَنِیْسِ الْغَرِیْبِیْنَ رَ حْمَۃٍ لِّلْعٰلَمِیْنَ رَاحَۃِ الْعَاشِقِیْنَ مُرَادِ الْمُشْتَاقِیْْنَ شَمْسِ الْعَارِفِیْنَ
مسافروں اور اجنبیوں کے غمگسار تمام جہانوں پر رحم فرمانیوالے عاشقوں کی راحت اور مُشتاقوں کی مراد جملہ ہائے عارفوں کے سورج
سِرَاجِ السَّالِکِیْنَ مِصْبَاحِ الْمُقَرَّبِیْنَ مُحِبِّ الْفُقَرَآئِ وَالْغُرَبَآئِ وَالْمَسَاکِیْنِ سَیِّدِ الثَّقَلَیْنِ
سالکوں کے چراغ مقربین کی شمع فقیروں پردیسیوں اور مسکینوں سے محبت و الفت رکھنے والے جنات اور انسانوں کے سردار
نَبِیِّ الْحَرَمَیْنِ اِمَامِ الْقِبْلَتَیْنِ وَسِیْلَتِنَا فِی الدَّ ارَیْنِ صَاحِبِ قَابَ قَوْسَیْنِ
حرم مکہ اور حرم مدینہ کے نبی بیت المقدس اور خانہ کعبہ دونوں قبلوں کے امام دنیا و آخرت میں ہمارے وسیلہ قاب قوسین کی نوید والے
مَحْبُوْبِ رَبِّ الْمَشْرِقَیْنِ وَالْمَغْرِبَیْنِ جَدِّ الْحَسَنِ وَالْحُسَیْنِ مَوْلٰنَا وَ مَوْلَی الثَّقَلَیْنِ اَبِی الْقَاسِمِ مُحَّمَدِ ابْنِ عَبْدِاللّٰہِ
مشرقوں اور مغربوں کے رب کے حبیب امام حسن اور امام حسین کے نانا ہمارے آقا جملہ جن و انس کے والی یعنی ابو القاسم محمد بن عبداللہ
نُوْرٍ مِّنْ نُّوْرِ اللّٰہِoیَآ اَیُّھَا الْمُشْتَاقُوْنَ بِنُوْرِجَمَالِہٖ صَلُّوْا عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَاَصْحَابِہٖ وَسَلِّمُوْا تَسْلِیْمًاo
اللہ کے نور میں سے عظمت و رفعت والے نور پر درود و سلام ان کے نور جمال کے عاشقو خوب صلوٰۃ و سلام بھیجو ان کی ذات والا صفات پر اور ان کے آل و اصحاب پر

مترجم۔ سید ارشد سعید کاظمی

ہوم پیج