حقیقت محمدی کی نورانیت


اور فتح الباری میں علامہ ابن حجر عسقلانی فرماتے ہیں :
ومما ظہر من علامات نبوتہ عند مولدہ وبعدہ ما اخرجہ الطبرانی عن عثمان بن ابی العاص الثقفی عن امہ انہا حضرت آمنۃ ام النبی ﷺ فلما ضربھا المخاض قالت فجعلت انظر الی النجوم تدلی حتیٰ اقول لتقعن علیَّ فلما ولدت خرج منھا نور اضاء لہ البیت والدار، وقال سمعت رسول ﷲ ﷺ یقول انی عبد ﷲ وخاتم النبیین وان آدم لمنجد ل فی طینتہ وسا خبر کم عن ذلک انا دعوۃ ابی ابراہیم وبشارۃ عیسیٰ ورویا امی التی رأت وکذلک امہات النبیین یرین وان ام رسول ﷲ ﷺ رأت حین وضعتہ نوراً اضاءت لہ قصور الشام اخرجہ احمد وصححہ ابن حبان والحاکم فی حدیث ابی امامة وعند احمد نحوہ واخرج ابن اسحاق عن ثور بن یزید عن خالد بن معدان عن اصحاب رسول اﷲ ﷺ نحوہ وقالت اضاء ت لہ بصری من ارض الشام۔

(فتح الباری، جلد ۶، ص۴۵۴، ۴۵۵)

حضور ﷺ کے وہ علامات نبوت جو ولادت مقدسہ کے وقت اور اس کے بعد ظاہر ہوئے ان میں سے بعض وہ ہیں جن کا اخراج طبرانی نے کیا ہے، عثمان بن ابی العاص ثقفی نے اپنی والدہ سے روایت کیا، وہ فرماتی ہیں کہ عند الولادت میں حضور ﷺ کی والدہ ماجدہ حضرت آمنہ رضی اﷲ تعالیٰ عنہا کے پاس حاضر تھی، جب انہیں دردِ زہ لاحق ہوا تو میں نے ستاروں کو دیکھا اس قدر نزدیک ہوگئے کہ گویا مجھ پر گرے پڑتے تھے، جب حضرت آمنہ نے حضور کو جنا توحضرت آمنہ سے ایک ایسا نور نکلا کہ جس سے سارا گھر منور ہوگیا اور ساری حویلی روشن ہوگئی، اس حدیث کی شاہد حضرت عرباض بن ساریہ کی حدیث ہے، وہ فرماتے ہیں کہ میں نے حضور ﷺ کو فرماتے سنا میں اس وقت خاتم النبیین تھا جب آدم علیہ السلام اپنے خمیر میں تھے اور اس کے متعلق میں تمہیں بتائوں گا (اور وہ یہ ہے) بے شک میں ابراہیم علیہ السلام کی دُعا اور عیسیٰ علیہ السلام کی بشارت ہوں اور اپنی والدہ ماجدہ کی وہ خواب ہوں جو انہوں نے دیکھی تھی اور اسی طرح انبیاء علیہم السلام کی ماؤں کو خوابیں دکھائی جاتی ہیں اور حضور ﷺ کی والدہ ماجدہ نے حضور علیہ الصلٰوۃ والسلام کو جنتے وقت ایک ایسا نور دیکھا تھا جس سے شام کے محلات روشن ہوگئے تھے، اس حدیث کا امام احمد نے اخراج کیا اور ابن حبان وحاکم نے اس کو صحیح کہا اور امام احمد کے نزدیک ابو امامہ کی حدیث اسی کی مانند ہے اور ابو اسحاق نے ثور بن یزید سے بروایت خالد بن معدان حضور ﷺ کے اصحاب سے بھی اسی کی مانند روایت کیا اور اس روایت میں ہے کہ اس نور کی وجہ سے ارض شام کا شہر بُصریٰ روشن ہوگیا۔
اور ابن کثیر میں اسی واقعہ کی روایت میں یہ مضمون بھی وارد ہوا کہ ولادت باسعادت کے وقت جو نور محمدی چمکا اس کی روشنی میں ملک شام کے شہر بُصری کے اونٹوں کی گردنیں چمکنے لگیں۔
چونکہ حضور ﷺ کی خلقت بے نظیر لطیف ونظیف اور نورانی ہے، کسی قسم کی غلاظت وکثافت جسم اقدس میں نہیں پائی جاتی اس لئے حضور علیہ الصلٰوۃ والسلام کا پسینۂ مبارک بلکہ تمام جسم اقدس حتیٰ کہ خون مبارک بھی انتہائی خوشبودار تھا۔